دوہڑے / دوہے / شلوک : میاں محمد بخش

[ਮੀਆਂ ਮੁਹੰਮਦ ਬਖ਼ਸ਼] [Mian Muhammad Bakhsh]

باغ بہاراں تے گلزاراں بن یاراں کس کاری ؟
یار ملے دکھ جان ہزاراں شکر کہاں لکھ واری
اچی جائی نینہں لگایا بنی مصیبت بھاری
یاراں باجھ محمد بخشا کون کرے غمخاری

ਬਾਗ਼ ਬਹਾਰਾਂ ਤੇ ਗੁਲਜ਼ਾਰਾਂ ਬਿਨ ਯਾਰਾਂ ਕਿਸ ਕਾਰੀ ?
ਯਾਰ ਮਿਲੇ ਦੁਖ ਜਾਣ ਹਜ਼ਾਰਾਂ ਸ਼ੁਕਰ ਕਹਾਂ ਲਖ ਵਾਰੀ
ਉੱਚੀ ਜਾਈ ਨੇਂਹੁੰ ਲਗਾਇਆ ਬਣੀ ਮੁਸੀਬਤ ਭਾਰੀ
ਯਾਰਾਂ ਬਾਜ੍ਹ ਮੁਹੰਮਦ ਬਖ਼ਸ਼ਾ ਕੌਣ ਕਰੇ ਗ਼ਮਖ਼ਾਰੀ

बाग़ बहारां ते गुलज़ारां बिन यारां किस कारी ?
यार मिले दुख जान हज़ारां शुकर कहां लख वारी
उच्ची जाई नेंहुं लगायआ बनी मुसीबत भारी
यारां बाज्ह मुहम्मद बख़्शा कौन करे ग़मख़ारी

Bāġh bahārāN tē gulazārāN bin yārāN kis kārī?

Yāra milē dukha jāaṇ hazārāN śhukar kahāN lakh vārī

ucī jā’ī nēnhu lagā’i’ā baṇī musībat bhāarī

yārāN bāj’h Muhamad baḵẖśhām kauṇ karē ġamaḵẖārī

Remembering Parveen Shakir

November 24, 1952 – December 26, 1994

طائر جاں کے گزرنے سے بڑا سانحہ ہے
شوق پرواز کا ٹوٹے ہوئے پر میں رہنا

Ghazal 1

پا بہ گل سب ہیں رہائی کی کرے تدبیر کون
دست بستہ شہر میں کھولے مری زنجیر کون
میرا سر حاضر ہے لیکن میرا منصف دیکھ لے
کر رہا ہے میری فرد جرم کو تحریر کون
آج دروازوں پہ دستک جانی پہچانی سی ہے
آج میرے نام لاتا ہے مری تعزیر کون
کوئی مقتل کو گیا تھا مدتوں پہلے مگر
ہے در خیمہ پہ اب تک صورت تصویر کون
میری چادر تو چھنی تھی شام کی تنہائی میں
بے ردائی کو مری پھر دے گیا تشہیر کون
سچ جہاں پابستہ ملزم کے کٹہرے میں ملے
اس عدالت میں سنے گا عدل کی تفسیر کون
نیند جب خوابوں سے پیاری ہو تو ایسے عہد میں
خواب دیکھے کون اور خوابوں کو دے تعبیر کون
ریت ابھی پچھلے مکانوں کی نہ واپس آئی تھی
پھر لب ساحل گھروندا کر گیا تعمیر کون
سارے رشتے ہجرتوں میں ساتھ دیتے ہیں تو پھر
شہر سے جاتے ہوئے ہوتا ہے دامن گیر کون
دشمنوں کے ساتھ میرے دوست بھی آزاد ہیں
دیکھنا ہے کھینچتا ہے مجھ پہ پہلا تیر کون

Ghazal 2

اب بھلا چھوڑ کے گھر کیا کرتے
شام کے وقت سفر کیا کرتے
تیری مصروفیتیں جانتے ہیں
اپنے آنے کی خبر کیا کرتے
جب ستارے ہی نہیں مل پائے
لے کے ہم شمس و قمر کیا کرتے
وہ مسافر ہی کھلی دھوپ کا تھا
سائے پھیلا کے شجر کیا کرتے
خاک ہی اول و آخر ٹھہری
کر کے ذرے کو گہر کیا کرتے
رائے پہلے سے بنا لی تو نے
دل میں اب ہم ترے گھر کیا کرتے
عشق نے سارے سلیقے بخشے
حسن سے کسب ہنر کیا کرتے

Kandiyaali Thor : a poem by Shiv Kumar Batalvi

कंडिआली थोहर : کنڈیالی تھور

میں کنڈیالی تھورھ وے سجنا
اگی وچ اجاڑاں
جاں اڈدی بدلوٹی کوئی
ورھ گئی وچ پہاڑاں

جاں اوہ دیوا جہڑا بلدا
پیراں دی دیہری ‘تے
جاں کوئی کوئل کنٹھ جدھے دیاں
سوتیاں جاون ناڑاں

جاں چمبے دی ڈالی کوئی
جو بالن بن جائے
جاں مروئے دا پھلّ بسنتی
جو ٹھنگ جان گٹاراں

جاں کوئی بوٹ کہ جس دے حالے
نین نہیں سن کھلھے
ماریا مالی کسّ غلیلا
لے داکھاں دیاں آڑاں

میں کنڈیالی تھورھ وے سجنا
اگی کتے کراہے
نہ کسے مالی سنجیا مینوں
نہ کوئی سنجنا چاہے

یاد تیری دے اچے محلیں
میں بیٹھی پئی روواں
ہر دروازے لگا پہرہ
آواں کہڑے راہے ؟

میں اوہ چندری جس دی ڈولی
لٹّ لئی آپ کہاراں
بنھن دی تھاں بابل جس دے
آپ کلیرے لاہے

قلی پٹّ عمر دی چادر
ہو گئی لیراں لیراں
تڑک گئے وے ڈھوواں والے
پلنگھ وصل لئی ڈاہے

میں کنڈیالی تھور وے سجنا
اگی وچ جو بیلے
نہ کوئی میری چھاویں بیٹھے
نہ پتّ کھاون لیلے

میں راجے دی بردی اڑیا
توں راجے دا جایا
توہیؤں دسّ وے موہراں ساہویں
ملّ کی کھیون دھیلے ؟

سکھر دپہراں جیٹھ دیاں نوں
ساؤن کویں میں آکھاں
چوہیں کوٹیں بھاویں لگن
لکھ تیاں دے میلے

تیری میری پریت دا اڑیا
اہیؤ حالَ سو ہویا
جیوں چکوی پہچان نہ سکے
چن چڑھیا دہوں ویلے
میں کنڈیالی تھورھ وے سجنا

اگی وچ جو باغاں
میرے مڈھ بنائی ورمی
کالے فنیئر ناگاں

میں مرغائی مانسراں دی
جو پھڑ لئی کسے شکرے
جاں کوئی لالھی پر سندھوری
نوچ لئے جدھے کاگاں

جاں سسی دی بھین وے دوجی
کم جدھا بس رونا
لٹّ کھڑیا جدھا پنوں ہوتاں
پر آئیاں نہ جاگاں

باغاں والیا تیرے باغیں
ہن جی نہیؤں لگدا
کھلی-کھلوتی میں واڑاں وچ
سو سو دکھڑے جھاگاں

मैं कंडिआली थोहर वे सज्जणा
उग्गी विच उजाड़ां ।
जां उडदी बदलोटी कोई
वर्ह गई विच पहाड़ां ।

जां उह दीवा जिहड़ा बलदा
पीरां दी देहरी ‘ते,
जां कोई कोइल कंठ जिद्हे दीआं
सूतीआं जावण नाड़ां ।

जां चम्बे दी डाली कोई
जो बालन बण जाए,
जां मरूए दा फुल्ल बसंती
जो ठुंग जाण गुटारां ।

जां कोई बोट कि जिस दे हाले
नैण नहीं सन खुल्लहे,
मारिआ माली कस्स गुलेला
लै दाखां दीआं आड़ां ।

मैं कंडिआली थोहर वे सज्जणा
उग्गी किते कुराहे,
ना किसे माली सिंज्या मैनूं
ना कोई सिंजणा चाहे ।

याद तेरी दे उच्चे महलीं
मैं बैठी पई रोवां,
हर दरवाज़े लग्गा पहरा
आवां किहड़े राहे ?

मैं उह चन्दरी जिस दी डोली
लुट्ट लई आप कहारां,
बन्नहण दी थां बाबल जिस दे
आप कलीरे लाहे ।

कूली पट्ट उमर दी चादर
हो गई लीरां लीरां,
तिड़क गए वे ढोवां वाले
पलंघ वसल लई डाहे ।

मैं कंडिआली थोहर वे सज्जणा
उग्गी विच जो बेले,
ना कोई मेरी छावें बैठे
ना पत्त खावण लेले ।

मैं राजे दी बरदी अड़िआ
तूं राजे दा जायआ,
तूहीयों दस्स वे मोहरां साहवें
मुल्ल की खेवण धेले ?

सिखर दुपहरां जेठ दीआं नूं
साउन किवें मैं आखां,
चौहीं कूटीं भावें लग्गण
लक्ख तीआं दे मेले ।

तेरी मेरी प्रीत दा अड़िआ
उहीयो हाल सू होया,
ज्युं चकवी पहचाण ना सक्के
चन्न चढ़आ देहुं वेले ।

मैं कंडिआली थोहर वे सज्जणा
उग्गी विच जो बाग़ां,
मेरे मुढ्ढ बणाई वरमी
काले फ़नियर नागां ।

मैं मुरगाई मानसरां दी
जो फड़ लई किसे शिकरे,
जां कोई लाल्ही पर संधूरी
नोच लए जिद्हे कागां ।

जां सस्सी दी भैण वे दूजी
कंम जिद्हा बस रोणा,
लुट्ट खड़िआ जिद्हा पुनूं होतां
पर आईआं ना जागां ।

बाग़ां वालिआ तेरे बाग़ीं
हुण जी नहीयों लग्गदा,
खली-खलोती मैं वाड़ां विच
सौ सौ दुखड़े झागां ।

English Transliteration: from http://www.apnaorg.com

Maen kanddiyaali thor ve sajana
Uggi vich ujaaddaan.
Jaan uddadi badaloti koi,
Var gayi vich pahaddan.
Jaan o deeva jehdda balda,
Piraan di dehri te,
Jaan koi koel kantth jide diyaan,
Sootiyan jaavan naaddaan.
Jaan chambe di daali koi
Jo baalan ban jaaye,
Jaan marueh da phull basanti,
Jo tthoong jaan gutaaraan.
Jaan koi boat ki jis de haale
Nain nahin san khulle,.
Maareya maali kass gulela
Le daakhaan diyaan aaddaan.

Maen kanddiyali thor ve sajana,
Uggi vich kuraahe.
Na kisse maali sinjeya mennu
Na koi sinjana chaahe.
Yaad teri de ucche mahileen,
Men baitthi payi rovaan,
Har darvaaze lagga pehra,
Aavaan kehdde raahe?
Men o chandari jis di doli,
Lutt layi aap kahaaraan,
Banhan di thaan babul jisde
Aap kalire laahe.
Kuli patt umar di chaadar
Ho gayi leeraan leeraan`
Tiddak gaye ve thovaan wale
Palangh vassal layi daahe.

Maen kanddiyaali thor ve sajana,
Uggi vich jo bele,
Na koi mere chhaaveen baithe,
Na patt khaavan lele.
Men raaje di bardi addeya
Tun raaje da jaaya,
Tuiyon das ve mohraan saahven,
Mul ki khovan ghele?
Sikhar dupehraan jeth diyaan nu
Saun kiven men aakhaan?
Chauheen kooteen bhaaven lagan
Lakh dhiyaan de mele.
Teri meri pareet da addeya
Ohiyo haal su hoya,
Jyun chakavi pehchaan na sakke
Chann chaddeya deun vele.

Maen kandiyaali thor ve sajana
Uggi vich jo baaggaan.
Mere mudd banaayi varmi
Kaale phaniyar naagaan.
Men murgaayi maansaraan di
Jo phadd layi kise shikare.
Jaan koi laali paer sindoori
Noch laye jide kaagaan.
Jaan sassi di bhaen ve duji
Kamm jida bas rouna
Lutt khaddeya jidha Punnu hotaan
Par aiyaan na jaagaan.
Baagaan vaaleya tere baageen
Hun ji nahiyon lagda,
Khali-khaloti maen vaaddaan vich
Sau sau dukhade jhaagaan.

A beautiful Poem by Thomas Moore (& Urdu Translation)

Thomas Moore (1779 – 1852 / Dublin / Ireland)
Poet (translation from English to Urdu): Nadir Kakorvi (born 1857)


Ere slumber’s chain has bound me,

Fond memory brings the light

Of other days around me;

The smiles, the tears,

Of boyhood’s years,

The words of love then spoken;

The eyes that shone,

Now dimm’d and gone,

The cheerful hearts now broken!

Thus, in the stilly night,

Ere slumber’s chain hath bound me,

Sad memory brings the light

Of other days around me.

When I remember all

The friends, so link’d together,

I’ve seen around me fall,

Like leaves in wintry weather;

I feel like one

Who treads alone

Some banquet-hall deserted,

Whose lights are fled,

Whose garlands dead,

And all but he departed!

Thus, in the stilly night,

Ere slumber’s chain has bound me,

Sad memory brings the light Of other days around me.


اکثر شبِ تنہائی میں
کچھ دیر پہلے نیند سے
گزری ہوئی دلچسپیاں
بیتے ہوئے دن عیش کے
بنتے ہیں شمعِ ذندگی
اور ڈالتے ہیں روشنی

میرے دلِ صد چاک پر

وہ بچپن اوروہ سادگی
وہ رونا وہ ہنسنا کبھی
پھر وہ جوانی کے مزے
وہ دل لگی وہ قہقہے
وہ عشق وہ عہدِ و فا
وہ وعدہ اور وہ شکریہ
وہ لذتِ بزمِ طرب
یاد آتے ہیں ایک ایک سب

دل کا کنول جو روز و شب
رہتا شگفتہ تھا سو اب
اسکا یہ ابتر حال ہے
اک سبزۂ پا مال ہے
اک پھو ل کُملایا ہوا
ٹوٹا ہوا بکھرا ہوا

روندا پڑا ہے خاک پر

یوں ہی شبِ تنہائی میں
کچھ دیر پہلے نیند سے
گزری ہوئی ناکامیاں
بیتے ہوئے دن رنج کے
بنتے ہیں شمعِ بےکسی
اور ڈالتے ہیں روشنی

ان حسرتوں کی قبر پر

جوآرزوئیں پہلے تھیں
پھر غم سے حسرت بن گئیں
غم دوستو ں کی فوت کا
ان کی جواناں موت کا

لے دیکھ شیشے میں مرے
ان حسرتوں کا خون ہے
جو گرد شِ ایام سے
جو قسمتِ ناکام سے
یا عیشِ غمِ انجام سے
مرگِ بتِ گلفام سے
خود میرے غم میں مر گئیں
کس طرح پاؤں میں حزیں

قابو دلِ بےصبر پر

جب آہ ان احباب کو
میں یاد کر اٹھتا ہوں جو
یوں مجھ سے پہلے اٹھ گئے
جس طرح طائر باغ کے
یا جیسے پھول اور پتیاں
گر جائیں سب قبل از خزاں

اور خشک رہ جائے شجر

اس وقت تنہائی مری
بن کر مجسم بےکسی
کر دیتی ہے پیشِ نظر
ہو حق سااک ویران گھر
ویراں جس کو چھوڑ کے
سب رہنے والے چل بسے
ٹو ٹے کواڑ اور کھڑ کیاں
چھت کے ٹپکنے کے نشاں
پرنالے ہیں روزن نہیں
یہ ہال ہے، آ نگن نہیں
پردے نہیں، چلمن نہیں
اک شمع تک روشن نہیں
میرے سوا جس میں کوئی
جھا نکے نہ بھولے سے کبھی
وہ خانۂ خالی ہے دل
پو چھے نہ جس کو دیو بھی

اجڑا ہوا ویران گھر

یوں ہی شب تنہائی میں
کچھ دیر پہلے نیند سے
گزری ہوئی دلچسپیاں
بیتے ہوئے دن عیش کے
بنتے ہیں شمعِ زندگی
اور ڈالتے ہیں روشنی

میرے دل صد چاک پر

Raat Gai Kar Tara Tara

A poem by Shiv Kumar Batalvi [ਸ਼ਿਵ ਕੁਮਾਰ ਬਟਾਲਵੀ /  شو کمار بٹالوی]

رات گئی کر تارہ تارہ
ہویا دل دا درد ادھارا
راتیں ایکن سڑیا سینہ
امبر ٹپّ گیا چنگیاڑا
اکھاں ہوئیاں ہنجھو ہنجھو
دل دا شیسا پارا پارا
ہن تاں میرے دو ہی ساتھی
اک ہوکا اک ہنجھو کھارا
میں بجھے دیوے دا دھوآں
کنجھ کراں تیرا روشن دوارا
مرنا چاہیا موت نہ آئی
موت وی مینوں دے گئی لارا
نہ چھڈّ میری نبض مسیحا
غم دا مگروں کون سہارا

ਰਾਤ ਗਈ ਕਰ ਤਾਰਾ ਤਾਰਾ
ਹੋਇਆ ਦਿਲ ਦਾ ਦਰਦ ਅਧਾਰਾ

ਰਾਤੀਂ ਈਕਣ ਸੜਿਆ ਸੀਨਾ
ਅੰਬਰ ਟੱਪ ਗਿਆ ਚੰਗਿਆੜਾ

ਅੱਖਾਂ ਹੋਈਆਂ ਹੰਝੂ ਹੰਝੂ
ਦਿਲ ਦਾ ਸ਼ੀਸਾ ਪਾਰਾ ਪਾਰਾ

ਹੁਣ ਤਾਂ ਮੇਰੇ ਦੋ ਹੀ ਸਾਥੀ
ਇਕ ਹੌਕਾ ਇਕ ਹੰਝੂ ਖਾਰਾ

ਮੈਂ ਬੁਝੇ ਦੀਵੇ ਦਾ ਧੂੰਆਂ
ਕਿੰਝ ਕਰਾਂ ਤੇਰਾ ਰੌਸ਼ਨ ਦੁਆਰਾ

ਮਰਨਾ ਚਾਹਿਆ ਮੌਤ ਨਾ ਆਈ
ਮੌਤ ਵੀ ਮੈਨੂੰ ਦੇ ਗਈ ਲਾਰਾ

ਨਾ ਛੱਡ ਮੇਰੀ ਨਬਜ਼ ਮਸੀਹਾ
ਗ਼ਮ ਦਾ ਮਗਰੋਂ ਕੌਣ ਸਹਾਰਾ

Oft, in the Stilly Night / اکثر شبِ تنہائی میں

A beautiful Poem by Thomas Moore (& Urdu Translation)

Thomas Moore (1779 – 1852 / Dublin / Ireland)
Poet (translation from English to Urdu): Nadir Kakorvi (born 1857)

Singer (Urdu): Reshma (1947-2013)

Oft, in the stilly night,

Ere slumber’s chain has bound me,

Fond memory brings the light

Of other days around me;

The smiles, the tears,

Of boyhood’s years,

The words of love then spoken;

The eyes that shone,

Now dimm’d and gone,

The cheerful hearts now broken!

Thus, in the stilly night,

Ere slumber’s chain hath bound me,

Sad memory brings the light

Of other days around me.

When I remember all

The friends, so link’d together,

I’ve seen around me fall,

Like leaves in wintry weather;

I feel like one

Who treads alone

Some banquet-hall deserted,

Whose lights are fled,

Whose garlands dead,

And all but he departed!

Thus, in the stilly night,

Ere slumber’s chain has bound me,

Sad memory brings the light

Of other days around me.

اکثر شبِ تنہائی میں
کچھ دیر پہلے نیند سے
گزری ہوئی دلچسپیاں
بیتے ہوئے دن عیش کے
بنتے ہیں شمعِ ذندگی
اور ڈالتے ہیں روشنی

میرے دلِ صد چاک پر

وہ بچپن اوروہ سادگی
وہ رونا وہ ہنسنا کبھی
پھر وہ جوانی کے مزے
وہ دل لگی وہ قہقہے
وہ عشق وہ عہدِ و فا
وہ وعدہ اور وہ شکریہ
وہ لذتِ بزمِ طرب
یاد آتے ہیں ایک ایک سب

دل کا کنول جو روز و شب
رہتا شگفتہ تھا سو اب
اسکا یہ ابتر حال ہے
اک سبزۂ پا مال ہے
اک پھو ل کُملایا ہوا
ٹوٹا ہوا بکھرا ہوا

روندا پڑا ہے خاک پر

یوں ہی شبِ تنہائی میں
کچھ دیر پہلے نیند سے
گزری ہوئی ناکامیاں
بیتے ہوئے دن رنج کے
بنتے ہیں شمعِ بےکسی
اور ڈالتے ہیں روشنی

ان حسرتوں کی قبر پر

جوآرزوئیں پہلے تھیں
پھر غم سے حسرت بن گئیں
غم دوستو ں کی فوت کا
ان کی جواناں موت کا

لے دیکھ شیشے میں مرے
ان حسرتوں کا خون ہے
جو گرد شِ ایام سے
جو قسمتِ ناکام سے
یا عیشِ غمِ انجام سے
مرگِ بتِ گلفام سے
خود میرے غم میں مر گئیں
کس طرح پاؤں میں حزیں

قابو دلِ بےصبر پر

جب آہ ان احباب کو
میں یاد کر اٹھتا ہوں جو
یوں مجھ سے پہلے اٹھ گئے
جس طرح طائر باغ کے
یا جیسے پھول اور پتیاں
گر جائیں سب قبل از خزاں

اور خشک رہ جائے شجر

اس وقت تنہائی مری
بن کر مجسم بےکسی
کر دیتی ہے پیشِ نظر
ہو حق سااک ویران گھر
ویراں جس کو چھوڑ کے
سب رہنے والے چل بسے
ٹو ٹے کواڑ اور کھڑ کیاں
چھت کے ٹپکنے کے نشاں
پرنالے ہیں روزن نہیں
یہ ہال ہے، آ نگن نہیں
پردے نہیں، چلمن نہیں
اک شمع تک روشن نہیں
میرے سوا جس میں کوئی
جھا نکے نہ بھولے سے کبھی
وہ خانۂ خالی ہے دل
پو چھے نہ جس کو دیو بھی

اجڑا ہوا ویران گھر

یوں ہی شب تنہائی میں
کچھ دیر پہلے نیند سے
گزری ہوئی دلچسپیاں
بیتے ہوئے دن عیش کے
بنتے ہیں شمعِ زندگی
اور ڈالتے ہیں روشنی

میرے دل صد چاک پر

A message of hope from Hafez

Ghazal # 255 from Dewan-e-Hafez [یوسف گم گشته بازآید به کنعان غم مخور ]

یوسف گم گشته بازآید به کنعان غم مخور
کلبه احزان شود روزی گلستان غم مخور
ای دل غمدیده حالت به شود دل بد مکن
وین سر شوریده باز آید به سامان غم مخور
گر بهار عمر باشد باز بر تخت چمن
چتر گل در سر کشی ای مرغ خوشخوان غم مخور
دور گردون گر دو روزی بر مراد ما نرفت
دائما یکسان نباشد حال دوران غم مخور
هان مشو نومید چون واقف نه‌ای از سر غیب
باشد اندر پرده بازیهای پنهان غم مخور
ای دل ار سیل فنا بنیاد هستی بر کند
چون تو را نوح است کشتیبان ز طوفان غم مخور
در بیابان گر به شوق کعبه خواهی زد قدم
سرزنشها گر کند خار مغیلان غم مخور
گر چه منزل بس خطرناک است و مقصد بس بعید
هیچ راهی نیست کان را نیست پایان غم مخور
حال ما در فرقت جانان و ابرام رقیب
جمله می‌داند خدای حال گردان غم مخور
حافظا در کنج فقر و خلوت شبهای تار
تا بود وردت دعا و درس قرآن غم مخور

Your lost Joseph will return to Canaan, do not grieve
This house of sorrows will become a garden, do not grieve

Oh grieving heart, you will mend, do not despair
This frenzied mind will return to calm, do not grieve

When the spring of life sets again in the meadows
A crown of flowers you will bear, singing bird, do not grieve

If these turning epochs do not move with our will today
The spheres of time are not constant, do not grieve

Don’t lose hope, for awareness cannot perceive the unseen
Behind the curtains hidden scenes play, do not grieve

Oh heart, should a flood of destruction engulf the world
If Noah is at your helm, do not grieve

As you step through the desert longing for the Ka’aba
The thorns may reproach you, do not grieve

Home may be perilous and the destination out of reach
But there are no paths without an end, do not grieve

Our state in separation from friends and with demands of foes
The God who spins fate knows all, do not grieve

Hafez, in the corner of poverty and loneliness of dark nights
As long as your words are prayers and lessons of Quran, do not grieve

English Translation Source: https://blogs.harvard.edu/sulaymanibnqiddees

Audio 1: https://ganjoor.net/AudioClip/?a=6134

Audio 2: https://ganjoor.net/AudioClip/?a=11678

ساون اور برسات

A collection of poetry renditions on the topics of ” ساون” (The 4th month of Punjabi calendar associated with rains) / برسات (typically, the Monsoon season in subcontinent)

فیض احمد فیض

آئے کچھ ابر کچھ شراب آئے
اس کے بعد آئے جو عذاب آئے
بام مینا سے ماہتاب اترے
دست ساقی میں آفتاب آئے
ہر رگ خوں میں پھر چراغاں ہو
سامنے پھر وہ بے نقاب آئے
عمر کے ہر ورق پہ دل کی نظر
تیری مہر و وفا کے باب آئے
کر رہا تھا غم جہاں کا حساب
آج تم یاد بے حساب آئے
نہ گئی تیرے غم کی سرداری
دل میں یوں روز انقلاب آئے
جل اٹھے بزم غیر کے در و بام
جب بھی ہم خانماں خراب آئے
اس طرح اپنی خامشی گونجی
گویا ہر سمت سے جواب آئے
فیضؔ تھی راہ سر بسر منزل
ہم جہاں پہنچے کامیاب آئے

ناصر کاظمی

رنگ برسات نے بھرے کچھ تو
زخم دل کے ہوٕئے ہرے کچھ تو
فرصتِ بے خودی غنیمت ہے
گردشیں ہو گئیں پرے کچھ تو
کتنے شوریدہ سر تھے پروانے
شام ہوتے ہی جل مرے کچھ تو
ایسا مشکل نہیں ترا ملنا
دل مگر جستجو کرے کچھ تو
آؤ ناصر کوئی غزل چھیڑیں
جی بہل جائے گا ارے کچھ تو

پھر ساون رت کی پون چلی تم یاد آئے
پھر پتوں کی پازیب بجی تم یاد آئے
پھر کونجیں بولیں گھاس کے ہرے سمندر میں
رت آئی پیلے پھولوں کی تم یاد آئے
پھر کاگا بولا گھر کے سونے آنگن میں
پھر امرت رس کی بوند پڑی تم یاد آئے
پہلے تو میں چیخ کے رویا اور پھر ہنسنے لگا
بادل گرجا بجلی چمکی تم یاد آئے
دن بھر تو میں دنیا کے دھندوں میں کھویا رہا
جب دیواروں سے دھوپ ڈھلی تم یاد آئے

سدرشن فاکر

کچھ تو دنیا کی عنایات نے دل توڑ دیا
اور کچھ تلخئ حالات نے دل توڑ دیا
ہم تو سمجھے تھے کے برسات میں برسے گی شراب
آئی برسات تو برسات نے دل توڑ دیا
دل تو روتا رہے اور آنکھ سے آنسو نہ بہے
عشق کی ایسی روایات نے دل توڑ دیا
وہ مرے ہیں مجھے مل جائیں گے آ جائیں گے
ایسے بے کار خیالات نے دل توڑ دیا
آپ کو پیار ہے مجھ سے کہ نہیں ہے مجھ سے
جانے کیوں ایسے سوالات نے دل توڑ دیا

Ghazal: Faiz Ahmed Faiz – tere gham ko jaaN ki Talaash thhi

ترے غم کو جاں کی تلاش تھی ترے جاں نثار چلے گئے
تری رہ میں کرتے تھے سر طلب سر رہ گزار چلے گئے
تری کج ادائی سے ہار کے شب انتظار چلی گئی
مرے ضبط حال سے روٹھ کر مرے غم گسار چلے گئے
نہ سوال وصل نہ عرض غم نہ حکایتیں نہ شکایتیں
ترے عہد میں دل زار کے سبھی اختیار چلے گئے
یہ ہمیں تھے جن کے لباس پر سر رہ سیاہی لکھی گئی
یہی داغ تھے جو سجا کے ہم سر بزم یار چلے گئے
نہ رہا جنون رخ وفا یہ رسن یہ دار کرو گے کیا
جنہیں جرم عشق پہ ناز تھا وہ گناہ گار چلے گئے

Hindi Transliteration: Rekhta.org

तिरे ग़म को जाँ की तलाश थी तिरे जाँ-निसार चले गए
तिरी रह में करते थे सर तलब सर-ए-रहगुज़ार चले गए
तिरी कज-अदाई से हार के शब-ए-इंतिज़ार चली गई
मिरे ज़ब्त-ए-हाल से रूठ कर मिरे ग़म-गुसार चले गए
न सवाल-ए-वस्ल न अर्ज़-ए-ग़म न हिकायतें न शिकायतें
तिरे अहद में दिल-ए-ज़ार के सभी इख़्तियार चले गए
ये हमीं थे जिन के लिबास पर सर-ए-रह सियाही लिखी गई
यही दाग़ थे जो सजा के हम सर-ए-बज़्म-ए-यार चले गए
न रहा जुनून-ए-रुख़-ए-वफ़ा ये रसन ये दार करोगे क्या
जिन्हें जुर्म-ए-इश्क़ पे नाज़ था वो गुनाहगार चले गए

Shaukat Ali sings Faiz in PTV (1974)

فیض احمد فیض : جب تیری سمندر آنکھوں میں

Faiz Ahmed Faiz : jab teri samundar aankhon mein

یہ دھوپ کنارا شام ڈھلے
ملتے ہیں دونوں وقت جہاں
جو رات نہ دن جو آج نہ کل
پل بھر کو امر پل بھر میں دھواں
اس دھوپ کنارے پل دو پل
ہونٹوں کی لپک
بانہوں کی چھنک
یہ میل ہمارا جھوٹ نہ سچ
کیوں رار کرو کیوں دوش دھرو
کس کارن جھوٹی بات کرو
جب تیری سمندر آنکھوں میں
اس شام کا سورج ڈوبے گا
سکھ سوئیں گے گھر در والے
اور راہی اپنی رہ لے گا

English transliteration:

ye dhoop kinara, shaam dhaley
miltey haiN dono waqt jahaN
jo raat na din, jo aaj na kal
pal bher ko amer, pal bher meiN dhuaaN
iss dhoop kinarey, pal do pal
hontoN ki lapak
banhoN ki chhanak
ye mel hamara, jhot na sach
kiyuN rar karo, kiyuN dosh dharo
kis karan jhooti baat karo
jab teri samundar aankhoN meiN
is shaam ka suraj doobey ga
sukh soeiN gey gher der waley
aur raahi apni rah le ga